غزل۔فضائے


غزل۔فضائے Cover Image
Share

فضائے ہر دوعالم ہنس پڑے جب یار ہنستا ہے

وگرنہ خشک ہونٹوں میں چبھا ہر خار ہنستا ہے

 

مری سرگوشیوں میں کچھ عجب آواز رہتی ہے

کہ جیسے غار میں بیٹھا کوئی خونخوار ہنستا ہے

 

یہ کس منحوس نے میری حسیں وادی کو دیکھا تھا

کہ اب سرخی سڑک پر دیکھ لالہ زار ہنستا ہے

 

میں جب دیکھوں حسیں ہونٹوں پہ پھیلی مسکراہٹ کو

مرے سینے میں بیٹھا صاحبِ کردار ہنستا ہے    

 

کسی بے بس کی عرضی تلملا اٹھتی ہے چپ کے سے

بہت مایوس کن لہجے میں جب انکار ہنستا ہے

 

مروّت، درد، عفّت، عشق و الفت مل کے روتے ہیں

کہ جب مظلوم عورت دیکھ کے غمخوار ہنستا ہے

 

کسی جھونپڑ میں خالی دیگچی جل جل کے روتی ہے

کسی کاخِ سما اندوز میں انبار ہنستا ہے

 

میں جب بھی آئینے میں دیکھتا ہوں اپنے چہرے کو

بہت حیران ہو کے آئینہ ہر بار ہنستا ہے

 

ہمیشہ ہنس کے ملتا ہوں میں جب لوگوں سے محفل میں

مرے اندر کوئی بیٹھا ہوا بیزار ہنستا ہے